Masael Quetta

ناکامیاں افغانستان کے اندر ہیں پاکستان پر انگلیاں اٹھانا چھوڑ دیں ، معید یوسف

0 484

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

ناکامیاں افغانستان کے اندر ہیں پاکستان پر انگلیاں اٹھانا چھوڑ دیں ، معید یوسف

اسلام آباد(مسائل نیوز ڈیسک ) وزیراعظم عمران خان کے مشیر برائے قومی سلامتی ڈاکٹر معید یوسف نے کہا ہے کہ ناکامیاں افغانستان کے اندر ہیں پاکستان پر انگلیاں اٹھانا چھوڑ دیں ، جس وقت افغانستان میں ڈیڑھ لاکھ غیر ملکی فوجی تعینات تھے، اس وقت پاکستان کہہ رہا تھا کہ افغانستان کے لیے سیاسی حل تلاش کیا جائے ، تب کسی نے اس کی نہ سنی ، اب ان ناکامیوں پر توجہ مرکوز کریں۔تفصیلات کے مطابق غیر ملکی میڈیا کو انٹرویو دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پاکستان سے زیادہ کسی دوسرے ملک کو افغانستان میں قیام امن کی ضرورت نہیں ہے ، کسی کو بھی کہنا کہ طالبان کو کسی تصفیے کے لیے تیار کرے احمقوں کی جنت میں رہنے کے مترادف ہے ،

- Advertisement -

زمینی حقیقت کو نظر انداز نہیں کیا جا سکتا ، طالبان افغانستان کے آدھے سے زیادہ رقبے پر کنٹرول حاصل کر چکے ہیں ، وہ ہر روز ایک نا ایک ضلعے پر قبضہ کر رہے ہیں ، وہ اس طرح نقل و حرکت کر رہے ہیں جیسے کے وہ جنگ کے میدان میں ہوں۔معید یوسف نے کہا کہ طالبان ہوں ، اشرف غنی یا دیگر سیاسی قوتیں، انہیں کسی تصفیے یا نتیجہ خیز عمل تک پہنچا کر کون فائدہ اٹھا سکتا ہے؟ کیا اس بارے میں کوئی شکوک و شبہات پائے جاتے ہیں کہ افغان حکومت کو ایک ایک پائی امریکہ ، یورپ اور بین الاقوامی برادری سے ملتی ہے؟ ان کا افغان حکومت پر کتنا کنٹرول ہے

کیا یہ سیاسی قوتیں انہیں افغانستان میں ایک فعال حکومت بنانے یا بدعنوانی کے بارے میں بات چیت کرنے کے لیے قائل کر سکیں؟۔مشیر قومی سلامتی نے کہا کہ ہمیں گن کلچر پڑوس سے ملا ہے، افغان پناہ گزینوں کا بوجھ اٹھا رہے ہیں، اتنی قربانیاں دے کر بھی پاکستان سے کہا جا رہا ہے کہ ڈو مور یہ بدقسمتی ہے، دوبارہ اس سب کے متحمل نہیں ہو سکتے، صرف چاہتے ہیں کہ افغان مسئلہ کا سیاسی حل تلاش کیا جائے، چاہتے ہیں افغان خود اپنے مستقبل کا فیصلہ کریں انہوں نے مزید کہا کہ زمینی حقیقت یہ ہے کہ امریکا نے انخلا کا فیصلہ کیا اسے اچھی طرح پتہ تھا کہ ملک میں جہاں وہ 20 سال سے زیادہ موجود رہا ہے ، وہاں سے اس کے نکلنے کے بعد یہ ملک کتنا غیر مستحکم ہو گا اور طالبان پیش قدمی کریں گے ، اب پاکستان کی طرف رخ کرنا اور ہمیں کہنا کہ کچھ کریں ، جس وقت افغانستان میں ڈیڑھ لاکھ غیر ملکی فوجی تعینات تھے، اس وقت پاکستان کہہ رہا تھا کہ افغانستان کے لیے سیاسی حل تلاش کیا جائے ، تب کسی نے اس کی نہ سنی ، اب ان ناکامیوں پر توجہ مرکوز کریں۔

You might also like

Leave A Reply

Your email address will not be published.